Our collective shame.

Since yesterday, I am not just furious, but burning with shame. I should have, as a citizen of the country, refused to sign that National ID Card form which makes me pass judgment on someone else’s faith. I should have asked the Government much, much earlier why they made us complicit in the crime of persecution. I should have, also, immediately resigned from my job after an anchor on the television station I work announced that Ahmadis should be killed and no action was taken against the anchor by the management of the TV station. As a reporter, I should have asked politicians and government functionaries more often why they weren’t working towards repealing the Blasphemy Act and other ordinances that have led to the persecution of Ahmadis. I failed, and as Tazeen points out on her blog, we all have blood on our hands. We can blame the Taliban, the Government of Punjab, Maudoodi, Bhutto, Sipah-e-Sahaba Pakistan and Zia, but first, we must also blame ourselves for allowing yesterday’s events to take place. No matter how hard we apologize, it will not change or alter what happened yesterday, and what could easily happen tomorrow if the current state of events don’t change.

The rest, I will let Faiz Ahmed Faiz say:

“yeh dagh dagh ujala, yeh shab-gazida sehar
woh intezar tha jis ka, yeh woh sahar tau nahi
yeh woh sahar tau nahin, jis ki arzoo lekar
chale thay yaar ke mil jayegi kahin na kahin

falak ke dasht mein taron ki akhri manzil
kahin tau hoga shab-e-sust mauj ka sahil
kahin tau jaa ke rukega safina-e-gham-e-dil

jawaan lahu ki pur asrar shahrahon pe
chale jo yaar tau daman pe kitne hath parhay
diyar-e-husn ki besabr khwabgahon se
pukarti rahin baahein, badan bulate rahe
bahut aziz thi lekin rukh-e-sahar ki lagan

bahut qarin tha hasinan-e-nur ka daman
subuk subuk thi tamanna, dabi dabi thi thakan
suna hai ho bhi chuka hai firaq-e-zulmat o noor
suna hai ho bhi chuka hai visal-e-manzil o gam

badal chuka hai bahut ahl-e-dard ka dastoor
nishat-e-vasl halal o azab-e-hijr haram

jigar ki aag, nazar ki umang, dil ki jalan
kisi pe chara-e-hijran ka kuch asar hi nahin

kahan se ayi nigar-e-saba, kidhar ko gayi?
abhi charagh-e-sar-e-rah ko kuch khabar hi nahi
abhi girani-e-shab mein kami nahi ayi
najat-e-dida-o-dil ki garhi nahi ayi
chale chalo, ke woh manzil abhi nahi ayi”

P.S: While much has been said about the government’s role in yesterday’s events, Samaa TV reported this morning that not a single politician or government functionary attended the funerals of those who were killed yesterday. To them, I ask this: would it have been a sin to have at least attended the funerals and showed your support to the community? Lest we forget, the only fault of those who died was that they believed in a faith that was different from yours.

Recommended blog posts about yesterday’s events:

Kala Kawa: Hanging my head in shame.
Chapati Mystery: We Are All Ahmadi
CHUP! – Changing Up Pakistan: Targeting the Ahmadis
The Sister: About today/Main Baghi Hoon

Share

About these ads
14 comments
  1. roshni said:

    Sad incident..and sadder the prejudice..

  2. Shahyan said:

    I appreciate your sentiment. But what are you going to do to change things? Will you refuse to sign NIC or passport forms in the future? Will you speak up regularly in defense of the community? It is easy to get swept up in the emotion of such events. It has happened before, and then the masses quickly retreat into their state of blissful ignorance and don’t even acknowledge that there is a problem, because they are “simple” Muslims and this doesn’t concern them.

    As I said before, I appreciate your sentiment. But will you be this outraged a year from now? Three months from now? Even a week from now?

  3. All those who signed the form against Ahmadis when renewing their Pakistani passports should hang their heads in shame at the blood that is on their hands. It is now time to act in protest and end the extermists’ hold upon the government to ransom. Otherwise, tomorrow it will be other groups that will suffer. Don’t let all those lives go to waste, let’s do something about it.

  4. Akshay said:

    This is exactly how so many of use feel about Godhra. More and more Indians and Pakistanis should think like you and so many other concerned citizens do. God help the liberal voice in India and Pakistan

  5. Saira said:

    You should have an option under your posts that allows viewers to easily share this on facebook/twitter/etc..

    • saira – thanks for the feedback, have added one.

  6. Khalid said:

    Very brave. God bless you and all who commented. May you always feel like this and age does not make you a coward. If we have more people like you who have a sense of justice, I hope Pakistan may survive. I am wondering whether it is too late now. Or we can still convince other people to speak up.

    Wassalam

  7. tahir said:

    What happened to Ahmedis is realy condemable but that doesn’t make them Muslims.Like any other religion Islam too carries its criteria and you are supposed to follow it.
    Ahmedis had better do us a favor:either accept the fact they are not Muslims or they be Muslims again.

  8. kashifiat said:

    I beg to disagree with you.

    Allah and his prophet PBUH have given a clear directions about status of those who used Islam for their personal benefits. Ahmadies are one of them all Muslims scholars irrespective of fact and sect, declare them as Non Muslim, then who are we to deny this?

    Basically, what ever u have written is fashion of English medium liberals who nothing to do with Pakistani society and interested in promoting Western ideology.

    To prevent the Makkah and Madina from Non Muslims under the disguise of Muslim names as per the clear directions of PBUH its important that they should declare them selves as Non Muslims.

    Your sentiments against blasphemy law is clearly showing that your approach is stereotype and you have know knowledge and have no in-depth analysis and insights on this issue. Please don’t behave like a mouth piece of Ahmadies.

    What ever happened with them is not appreciated by any faction of Muslim society and we condemn this brutal act but it doesn’t mean that we allow every Tom and Herry crying against Islamic jurisdiction which is based on Quran and Sunnah

    You should kindly read

    http://kashifiat.wordpress.com/2010/06/09/do-we-really-need-to-repeal-laws/

  9. kashifiat said:

    Kindly read the whole speech of Bhutto who delivered by 1973 historic constitutional amendment and a great achievement of Muslims of sun continent after formation of Pakistan – But problem is that it is in Urdu -Our national language

    اب آئیے ۷ ستمبر ۴۷۹۱ءکے اس تاریخی دن کی طرف جس دن قادیانی غیرمسلم قرار پاتے۔ اس دن وزیراعظم پاکستان ذوالفقار علی بھٹو مرحوم نے ایک تاریخی تقریر کی۔ اس وقت مکمل تقریر نقل کرنا تو ممکن نہیں مگر جستہ جستہ حصے آپ کی دلچسپی کے لیے حاضرِ خدمت ہے:

    جنابِ صدر! میں جب یہ کہتا ہوں کہ یہ فیصلہ پورے ایوان کا فیصلہ ہے تو اس سے میرا مقصد یہ نہیں کہ میں کوئی سیاسی مفاد حاصل کرنے کے لیے اس بات پر زور دے رہا ہوں۔ ہم نے اس مسئلے پر ایوان کے تمام ممبران سے تفصیلی طور پر تبادلہ خیال کیا ہے جن میں تمام پارٹیوں اور ہر طبقہ خیال کے نمائندے موجود تھے۔ آج کے روز جو فیصلہ ہوا ہے یہ ایک قومی فیصلہ ہے۔ پاکستان کے عوام کا فیصلہ ہے۔ یہ فیصلہ پاکستان کے ارادے، خواہشات اور ان کے جذبات کی عکاسی کرتا ہے۔ میں نہیں چاہتا کہ فقط حکومت ہی اس فیصلے کی تحسین پائے اور نہ میں یہ چاہتا ہوں کہ کوئی ایک فرد اس فیصلے کی تعریف و تحسین کا حقدار بنے۔ میرا کہنا یہ ہے کہ یہ مشکل فیصلہ ہے بلکہ میری ناچیز رائے میں کئی پہلوﺅں سے بہت ہی مشکل فیصلہ جمہوری اداروں اور جمہوری حکومت کے بغیر نہیں کیا جاسکتا تھا۔

    یہ ایک پرانا مسئلہ ہے، نوے سال پرانا مسئلہ ہے۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ مسئلہ مزید پیچیدہ ہوتا چلا گیا۔ اس سے ہمارے معاشرے میں تلخیاں اور تفرقے پیدا ہوئے لیکن آج کے دن تک اس مسئلے کا کوئی حل تلاش نہیں کیا جاسکا ہمیں بتایا جاتا ہے کہ یہ مسئلہ ماضی میں بھی پیدا ہوا تھا، ایک بار نہیں بلکہ کئی بار۔ ہمیں بتایا گیا ہے کہ ماضی میں اس مسئلہ پر جس طرح قابو پایا گیا اُسی طرح اب کی بار بھی ویسے ہی اقدامات سے اس مسئلہ پر قابو پایا جاسکتا ہے۔ مجھے نہیں معلوم کہ اس سے پہلے اس مسئلے کے حل کے لیے کیا کچھ کیا گیا لیکن مجھے معلوم ہو کہ ۳۵۹۱ءمیں کیا ہوا تھا۔ ۳۵۹۱ءمیں اس مسئلے کے حل کے لیے طاقت کا وحشیانہ طور پر استعمال کیا گیا تھا جو اس مسئلے کا حل تھا۔

    جنابِ اسپیکر! ہماری موجودہ مساعی کا مقصد یہ رہا ہے کہ اس مسئلے کا مستقل حل تلاش کیا جائے اور میں آپ کو یقین دلا سکتا ہوں کہ ہم نے درست اور صحیح سمت اور حل تلاش کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی۔ یہ درست ہے کہ لوگوں کے جذبات، مشتعل ہوئے، غیرمعمولی احساسات ابھرے، قانون اور امن کا مسئلہ بھی پیدا ہوا، جائیداد اور جانوں کا اتلاف ہوا۔ پریشانی کے لمحات بھی آئے تمام قوم گزشتہ تین ماہ سے تشویش کے عالم میں رہی اور اس پر کشمکش اور بیم و رجا کے عالم میں رہی لیکن میں اجازت چاہتا ہوں کہ اس معزز ایوان کی توجہ اس تقریر کی طرف دلاﺅں جو میں نے قوم سے مخاطب ہوتے ہوئے ۳۱ جون کو کی تھی۔ اس تقریر میں مَیں نے پاکستان کے عوام سے واضح طور پر کہا تھا کہ یہ مسئلہ بنیادی طور پر اور اصولی طریقے سے مذہبی مسئلہ ہے۔ پاکستان کی بنیاد اسلام پر ہے۔ پاکستان مسلمانوں کے لیے وجود میں آیا تھا اگر کوئی ایسا فیصلہ کر لیا جاتا جسے اس ملک کے مسلمانوں کی اکثریت اسلام کی تعلیمات اور اعتقادات کی خلاف سمجھتی ہو تو اس سے پاکستان کے بنانے کی وجوہات اور تصور کو ٹھیس لگنے کا اندیشہ تھا۔ چونکہ یہ مسئلہ خالص مذہبی مسئلہ تھا، اس لیے میری حکومت کے لیے یا کسی ایک فرد کے لیے ان کی حیثیت میں مناسب نہ تھا کہ اس پر ۳۱ جون کو ہی کوئی فیصلہ دیا جاتا۔

    لاہور میں مجھے کئی لوگ ایسے ملے جنہوں نے کہا کہ آپ آج ہی، ابھی اور یہیں اعلان کر دیں مگر میں نے ان اصحاب سے کہا کہ پاکستان کی ایک قومی اسمبلی موجود ہے جو ملکی مسائل پر بحث کا سب سے بڑا ادارہ ہے۔ میری ناچیز رائے میں اس مسئلے کے حل کے لیے یہی مناسب جگہ ہے۔

    جنابِ والا! اکثریتی پارٹی کے رہنما کی حیثیت سے میں نے قومی اسمبلی کے ممبروں پر کسی طرح کا دباﺅ نہیں ڈالا۔ میں یہ مسئلہ قومی اسمبلی کے ممبران کے ضمیر پر چھوڑتا ہوں اور ان میں پارٹی کے ممبر بھی ہیں۔ پیپلز پارٹی کے ممبران اس بات کی تصدیق کریں گے کہ جہاں میں نے کئی بار بلا کر پارٹی کے موقف سے آگاہ کیا، وہاں اس مسئلہ پر میں نے اپنی پارٹی کے ایک ممبر پر بھی اثرانداز ہونے کی کوشش نہیں کی، سوائے ایک موقع پر جب اس مسئلہ پر کھلی بحث ہوئی تھی۔

    جنابِ اسپیکر! میں آپ کو یہ بتانا مناسب نہیں سمجھتا کہ اس مسئلہ کے باعث اکثر میں پریشان رہا اور راتوں کو مجھے نیند نہیں آئی۔ اس مسئلہ پر جو فیصلہ ہوا مَیں اس کے نتائج سے واقف ہوں۔ مجھے اس فیصلے کے سیاسی اور معاشی ردِعمل اور اس کی پیچیدگیوں کا علم ہے جس کا اثر مملکت کے تحفظ پر ہو سکتا ہے۔ یہ کوئی معمولی مسئلہ نہیں ہے۔ لیکن جیسا کہ میں نے پہلے کہا پاکستان وہ ملک ہے جو برصغیر کے مسلمانوں کو اس خواہش پر وجود میں آیا تھا کہ وہ اپنے لیے ایک علیحدہ مملکت چاہتے تھے، اس ملک کے باشندوں کی اکثریت کا مذہب اسلام ہے۔ میں اس فیصلے کو جمہوری طریقے سے نافذ کرنے میں اپنے کسی بھی اصول کی خلاف ورزی نہیں کر رہا۔ پیپلز پارٹی کا پہلا اصول ہے اسلام ہمارا دین ہے۔ اسلام کی خدمت ہماری پارٹی کے لیے اولین اہمیت رکھتی ہے۔ ہمارا دوسرا اصول ہے جمہوریت ہماری پالیسی ہے۔ چنانچہ ہمارے لیے فقط یہی درست راستہ تھا کہ ہم اس مسئلہ کو پاکستان کی قومی اسمبلی میں پیش کرتے۔ اس کے ساتھ ہی میں فخر سے کہہ سکتا ہوں کہ پاکستان کی معیشت کی بنیاد سوشلزم پر ہے۔ ہم سوشلسٹ اصولوں سے انحراف نہیں کرتے۔ ہم اپنی پارٹی کے تینوں اصولوں پر مکمل طور پر پابند رہے ہیں۔

    یہ فیصلہ مذہبی بھی ہے اور غیرمذہبی بھی۔ مذہبی اس لحاظ سے کہ یہ فیصلہ ان مسلمانوں کو متاثر کرتا ہے جو پاکستان میں اکثریت میں ہے اور غیرمذہبی اس لحاظ سے کہ ہم دورِ جدید میں رہتے ہیں۔ ہمارا آئین کسی مذہب و آئین کے خلاف نہیں بلکہ ہم نے پاکستان کے تمام شہریوں کو یکساں حقوق دیے ہیں۔ میری حکومت کے لیے اب یہ بات بہت اہم ہو گئی ہے کہ وہ پاکستان کے تمام شہریوں کے حقوق کی حفاظت کرے۔ یہ نہایت ضروری ہے کہ اور میں اس بات میں کوئی ابہام کی گنجائش نہیں رکھنا چاہتا۔

    جنابِ اسپیکر! میں آپ کو یقین دلانا چاہتا ہوں کہ اور ایوان کے ہر مختص کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ (اقلیتوں کی حفاظت) یہ فرض پوری طرح اور مکمل طور پر ادا کیا جائے گا۔ اس سلسلے میں کسی شخص کے ذہن میں شبہ نہیں رہنا چاہیے۔ ہم کسی قسم کی غارت گری اور تہذیب سوزی یا کسی اور طبقے یا شہری کی توہین اور بے عزتی برداشت نہیں کریں گے۔

    جنابِ اسپیکر! جیسا کہ میں نے کہا کہ ہمیں اُمید کرنی چاہیے کہ ہم نے اس مسئلے کا باب بند کر دیا ہے۔ یہ میری کامیابی نہیں یہ حکومت کی بھی کامیابی نہیں، یہ پاکستان کے عوام کی کامیابی ہے جس میں ہم بھی شریک ہیں۔ میں سارے ایوان کو خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں۔ مجھے احساس ہے کہ یہ فیصلہ متفقہ طور پر نہ کیا جاسکتا۔ اگر تمام ایوان کی جانب سے اور تمام پارٹیوں کی جانب سے تعاون اور جذبے کا فقدان ہوتا۔

    جنابِ والا! ماضی کو دیکھتے ہوئے اس مسئلے کے تاریخی پہلوﺅں پر اچھی طرح غور کرتے ہوئے میں پھر یہ کہوں گا کہ یہ سب سے زیادہ مشکل مسئلہ تھا، گھر گھر میں اس کا اثر تھا۔ یہ دیہات میں اس کا اثر تھا اور ہر فرد اس سے متاثر تھا۔ یہ مسئلہ سنگین تر ہوتا چلا گیا اور وقت کے ساتھ ساتھ ایک خوفناک شکل اختیار کر گیا اور ہمیں اس مسئلے کو حل کرنا ہی ہو گا۔ ہمیں تلخ حقائق کا سامنا کرنا ہی تھا۔ ہم اس مسئلے کو ہائی کورٹ یا اسلامی نظریاتی کونسل کے سپرد کر سکتے تھے۔ ظاہر ہے کہ حکومت اور حتیٰ کہ افراد بھی مسائل کو ٹالنا جانتے تھے اور انھیں جوں کا توں رکھ سکتے تھے۔ اس جذبے کے تحت قومی اسمبلی ایک کمیٹی کی صورت میں خفیہ اجلاس کرتی رہی۔ خفیہ اجلاس کرنے کی کئی ایک وجوہات تھیں۔ اگر قومی اسمبلی خفیہ اجلاس نہ کرتی تو جناب! کیا آپ سمجھتے ہیں کہ یہ تمام سچی باتیں اور حقائق ہمارے سامنے آسکتے؟ اور لوگ اس طرح آزادی اور بغیر کسی جھجھک کے اپنے اپنے خیالات کا اظہار کر سکتے؟ اگر ان کو معلوم ہوتا کہ یہاں اخبارات کے نمائندے بیٹھے ہیں اور لوگوں تک اس کی باتیں پہنچا رہے ہیں تو شریکِ اجلاس اس طرح اظہار نہیں کرتے جیسا کہ انھوں نے خفیہ اجلاسوں میں کیا۔

    جنابِ اسپیکر! میں اس زیادہ کچھ نہیں کہنا چاہتا۔ اس معاملے پر جو میرے جو احساسات تھے میں انھیں بیان کر چکا ہوں میں ایک بار پھر دہراتا ہوں کہ یہ ایک مذہبی معاملہ ہے یہ ایک فیصلہ ہے جو ہمارے عقائد سے متعلق ہے اور یہ فیصلہ پورے ایوان کا فیصلہ ہے اور پوری قوم کا فیصلہ ہے۔ یہ فیصلہ عوامی خواہشات کے مطابق ہے۔ میرے خیال میں یہ انسانی طاقت سے باہر تھا کہ یہ ایوان اس سے بہتر کچھ فیصلہ کر سکتا اور میرے خیال میں یہ بھی ممکن نہیں تھا کہ اس مسئلہ کو دوامی طور پر حل کرنے کے لیے موجودہ فیصلے سے کم کوئی اور فیصلہ ہو سکتا تھا۔

    کچھ لوگ ایسے بھی ہو سکتے ہیں جو اس فیصلے سے ناخوش ہوں گے۔ ہم یہ تو توقع بھی نہیں کر سکتے کہ اس مسئلے کے فیصلے سے تمام لوگ خوش ہو سکتے ہیں۔ اگر یہ مسئلہ آسان ہوتا اور ہر ایک کو خوش رکھنا ممکن ہوتا تو یہ مسئلہ بہت پہلے حل ہو گیا ہوتا۔ مجھے اچھی طرح معلوم ہے کہ ایسے لوگ بھی ہیں (ظاہری طور پر قادیانیوں کی طرف اشارہ ہے) جو اس فیصلے پر نہایت ناخوش ہوں گے۔ لیکن میں یہ ضرور کہوں گا کہ یہ ان لوگوں کے طویل المیعاد مفاد کے حق میں ہے کہ یہ مسئلہ حل کر لیا گیا ہے آج یہ لوگ (قادیانی) ناخوش ہوں گے۔ ان کو فیصلہ پسند نہ ہو گا۔ ان کو یہ فیصلہ ناگوار ہو گا لیکن حقیقت پسندی سے کام لیتے ہوئے اور مفروے پر اپنے آپ کو ان لوگوں میں شمار کرتے ہوئے میں یہ کہوں گا کہ ان کو بھی اس بات پر خوش ہونا چاہیے کہ اس فیصلے سے یہ مسئلہ حل ہوا اور ان کو آئینی حقوق کی ضمانت حاصل ہو گئی۔ مجھے یاد ہے کہ حزبِ مخالف کی طرف سے مولانا شاہ احمد نورانی نے یہ تحریک پیش کی تو انھوں نے ان لوگوں (قادیانیوں) کو مکمل تحفظ دینے کا ذکر کیا تھا جو اس فیصلے سے متاثر ہوں گے۔ ایوان اس یقین دہانی پر قائم ہے۔ یہ ہر جماعت کا فرض ہے یہ حکومت کا فرض ہے۔ حزبِ مخالف کا فرض ہے اور ہر شہری کا فرض ہے کہ وہ پاکستان کے تمام شہریوں کی یکساں طور پر حفاظت کریں۔ اسلام کی تعلیم رواداری کی ہے۔ مسلمان رواداری پر عمل کرتے رہے ہیں۔ اسلام نے فقط رواداری کی تعلیم ہی نہیں دی بلکہ تاریخ میں اسلامی معاشرے نے رواداری سے کام لیا ہے۔ اسلامی معاشرے نے تاریک زمانے میں یہودیوں کے ساتھ بہترین سلوک کیا جبکہ عیسائیت ان پر یورپ میں ظلم توڑ رہی تھی اور یہودیوں نے سلطنت عثمانیہ میں آکر پناہ لی۔ اگر یہودی دوسرے حکمران معاشرے سے بچ کر عربوں اور ترکوں کے اسلامی معاشرے میں پناہ لے سکتے ہیں تو پھر یہ یاد رکھنا چاہیے کہ ہماری مملکت اسلامی ہے۔ ہم مسلمان ہیں ہم پاکستانی ہیں اور یہ ہمارا مقدس فرض ہے کہ ہم تمام فرقوں، تمام لوگوں اور پاکستان کے تمام شہریوں کو یکساں طور پر تحفظ دیں۔

    اسپیکر صاحب! آپ کا شکریہ

  10. Mobeen said:

    And do you remember when Gen Zia ( who was declared Marde-e-Momin Mard-e-Haq by religous parties ) took over what he said about the members of the assembly and Bhutto’s companions? Bhutto Sahib was hijacked by extremist parties and he did it to win their support but the same extremist parties started protest against him and helped Zia and later on demanded Bhutto Sahib’s trial. So it was a political mistake by Z A Bhutto.Majority does not have the right to declare Non-Muslim any sect who is in minority. If we start accepting this rule what will you say about the hadith of Prophet Muhammad SAW in which he declared that there will be 73 sects and out of 73 just one sect will be on the right path.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

Follow

Get every new post delivered to your Inbox.

Join 64 other followers

%d bloggers like this: